• ای سی پی سکریٹری پارلیمانی امور کے سیکریٹری کو خط لکھتے ہیں۔
  • وزارت سے مطالبہ ہے کہ وزیر اعظم عمران خان کو الیکشن ترمیمی بل پر ای سی پی کے اعتراضات سے آگاہ کریں۔
  • ای سی پی کا کہنا ہے کہ سینیٹ انتخابات کے لئے کھلی بیلٹ طریقہ استعمال کرنا اس معاملے پر سپریم کورٹ کی رائے سے متصادم ہے۔

الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) نے وفاقی حکومت کو آگاہ کیا ہے کہ قومی اسمبلی سے منظور شدہ انتخابی ترمیمی بل کے 13 حصے آئین سے متصادم ہیں۔

ای سی پی نے ایک خط کے ذریعے اپنے تحفظات کے بارے میں وزارت پارلیمانی امور کے توسط سے وفاقی حکومت سے رابطہ کیا۔ ای سی پی کے سکریٹری نے وزارت میں اپنے ہم منصب کو یہ خط لکھا تھا۔

ای سی پی نے وزارت سے مطالبہ کیا ہے کہ وزیر اعظم عمران خان کو بل پر باڈی کے اعتراضات سے آگاہ کیا جائے۔

مزید پڑھ: عارف علوی کا کہنا ہے کہ انتخابات میں ای وی ایم کے استعمال سے متعلق حتمی فیصلہ ای سی پی کرے گا

خط میں ای سی پی نے کہا ہے کہ قومی اسمبلی نے منظور کیا بل آئین سے متصادم ہے۔ اس میں کہا گیا ہے کہ آبادی کے بجائے ووٹروں پر مبنی انتخابی حلقوں کی حد بندی آئین کے مطابق نہیں ہے۔

ای سی پی کے سکریٹری نے خط میں کہا ، “ووٹر لسٹ سے متعلق حقوق ای سی پی کے دائرہ اختیار میں ہیں اور مجوزہ الیکشن ایکٹ کی 13 دفعات غیر آئینی ہیں۔”

اس میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ سینیٹ انتخابات کے لئے خفیہ رائے شماری کے بجائے کھلی بیلٹ طریقہ استعمال کرنا سپریم کورٹ کی رائے سے متصادم ہے۔

پارلیمنٹ نے ایک دن میں 21 سرکاری بل پاس کیے

گذشتہ ہفتے قومی اسمبلی نے انتخابات (ترمیمی) بل ، 2020 سمیت 21 سرکاری بل پاس کیے۔

وزیر اعظم کے مشیر برائے پارلیمانی امور بابر اعوان نے قواعد معطل ہونے کے بعد بل کو غور کے لئے پیش کیا تھا۔

سرکاری میڈیا نے اطلاع دی ہے کہ ایوان نے صوتی رائے دہی کے بعد اکثریتی ووٹ کے ساتھ بل منظور کیا۔

مزید پڑھ: کیا حکومت کا نیا انتخابی بل آزاد ای سی پی کی بدنامی کر رہا ہے؟

الیکشن (ترمیمی) بل ، 2020 قومی اسمبلی میں 16 اکتوبر 2020 کو پیش کیا گیا تھا۔ اسی دن پارلیمانی امور کی قائمہ کمیٹی کو بھیجا گیا تھا۔

انتخابات (دوسری ترمیم) بل

اسی طرح ، ایوان نے الیکشن (دوسری ترمیم) بل بھی منظور کیا جو ٹکنالوجی اور جدید آلات کے استعمال کے ذریعے منصفانہ ، آزادانہ اور شفاف انتخابات سے متعلق ہے۔

اس بل کا مقصد بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کو ووٹ ڈالنے کے حقوق دینے کے لئے بھی ہے جو نادرا اور دیگر ایجنسیوں کی تکنیکی مدد سے ای سی پی میں خصوصی اختیار حاصل کرنے سے ہی ممکن ہوسکتا ہے۔

مزید پڑھ: وزیر اعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ دھاندلی کی روک تھام کے لئے الیکٹرانک ووٹنگ کا واحد حل ، انتخابات میں شفافیت کو یقینی بنانا

مذکورہ بالا مقاصد کے حصول کے لئے الیکشن ایکٹ 2017 کی دفعہ 94 اور 103 میں ترمیمیں طلب کی گئیں۔

اس بل کو ایوان نے ایوان میں بھی چلایا تھا۔

.



Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *