وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ پریس کانفرنس سے خطاب کر رہے ہیں۔ تصویر: فائل
  • وزیراعلیٰ سندھ ایک دن قبل منی لانڈرنگ ، جعلی اثاثوں اور نوری آباد پاور پلانٹ ریفرنس پر سماعت میں شریک نہیں ہوئے تھے۔
  • عدالت نے تمام ملزمان کو 30 جون کو اگلی سماعت کے لئے خود کو پیش کرنے کا حکم دیا۔
  • وزیراعلیٰ سندھ پر الزام ہے کہ انہوں نے قواعد کی خلاف ورزی کی جس کی وجہ سے نوری آباد پاور پلانٹ ریفرنس میں اربوں کے غبن ہوئے۔

اسلام آباد: احتساب عدالت نے منگل کو وزیر اعلی سندھ مراد علی شاہ کو نوری آباد پاور پلانٹ ریفرنس میں فرد جرم عائد کرنے کی تاریخ 30 جون مقرر کردی ، ایک رپورٹ کے مطابق خبر.

شاہ اصغر علی کی صدارت میں جعلی اکاؤنٹس ، نوری آباد پاور پلانٹ اور منی لانڈرنگ ریفرنس کی سماعت میں ایک روز قبل عدالت میں منعقد ہوا۔

عدالت نے پیشی سے استثنیٰ کے لئے وزیر اعلی کی درخواست منظور کرلی۔ نیب پراسیکیوٹر نے عدالت کو بتایا کہ ساتھی ملزم محمد علی مفرور ہے اور ملک سے باہر ہے۔ عدالت نے اس کے رد عمل میں محمد علی کو مفرور قرار دے دیا اور اس کے وارنٹ جاری کردیئے۔

جج نے علی کا نام نو فلائی لسٹ میں رکھنے کا حکم دیتے ہوئے کیس کے تمام ملزموں کو 30 جون کو خود کو عدالت میں پیش کرنے کا حکم دیا۔ انہوں نے اس کے بعد کارروائی ملتوی کردی۔

اس کے بعد انہوں نے اعلان کیا کہ عدالت 30 جون کو وزیر اعلی سندھ پر فرد جرم عائد کرے گی۔

نوری آباد پاور پلانٹ ریفرنس میں سی ایم سندھ پر کیا الزام ہے؟

نوری آباد پاور پلانٹ ریفرنس کا الزام ہے کہ وزیر اعلی سندھ نے قانون کی خلاف ورزی کرتے ہوئے سندھ میں بجلی کے منصوبوں کے لئے فنڈز جاری کیے۔ ریفرنس میں الزام لگایا گیا ہے کہ نوری آباد پاور کمپنی اور سندھ ٹرانسمیشن اینڈ ڈسپیچ کمپنی منصوبوں میں اربوں روپے کا غبن کیا گیا۔

نوری آباد پاور پروجیکٹ کا ابتدائی تصور حکومت سندھ نے 2012 میں کیا تھا لیکن “ریڈ ٹیپزم اور ریگولیٹری منظوریوں میں تاخیر” کی وجہ سے وہ اس پر عمل درآمد نہیں ہو سکا۔

یہ پروجیکٹ بالآخر اگست 2014 میں ایک سرکاری نجی شراکت کے تحت 13 ارب روپے کی لاگت سے شروع کیا گیا تھا۔ سندھ حکومت کے پاس 49 shares حصص ہیں جبکہ ایک نجی کمپنی میں 51 فیصد حصص ہیں۔

95 کلومیٹر طویل 132 کلو واٹ ڈبل سرکٹ ٹرانسمیشن لائن نوری آباد سے کراچی تک ایک ارب 95 کروڑ روپے کی لاگت سے بچھائی گئی۔ مراد اس وقت وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے خزانہ اور توانائی تھے۔ نیب نے الزام لگایا کہ اس عمل سے قومی خزانے کو $ 16 ملین کا نقصان ہوا ہے۔

.



Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published.