تصویر میں وزارت کے ذریعے مشترکہ تفصیلات دکھائی گئیں۔
  • وفاقی وزیر امین الحق کا کہنا ہے کہ اس ایپ کا مقصد سرکاری عہدیداروں کو ایک محفوظ مواصلات کا پلیٹ فارم مہیا کرنا ہے۔
  • ایپ ابتدائی طور پر ایک محفوظ چیٹ اور آڈیو کال کی سہولیات فراہم کرے گی۔
  • تمام سرکاری ملازمین کے لئے یہ اطلاق سرکاری مقصد کے لئے استعمال کرنا لازمی ہوگا۔

اسلام آباد: سرکاری عہدیداروں کو ایک محفوظ اور ہموار مواصلاتی پلیٹ فارم مہیا کرنے کے لئے ، وزارت انفارمیشن ٹیکنالوجی اور ٹیلی مواصلات نے “بیپ پاکستان” کے نام سے ایک ڈیجیٹل میسجنگ ایپ تیار کی ہے۔

یہ انکشاف حکومتی کارکنوں کے مابین محفوظ مواصلاتی چینلز کے مطالبے کے بعد ہوا ہے جس میں یہ انکشاف ہوا ہے کہ اس کی مؤکل حکومتوں نے مختلف ممالک میں اسرائیلی ساختہ نگرانی سافٹ ویئر کے ذریعہ 50،000 سے زیادہ تعداد کو نشانہ بنایا ہے جو صحافیوں ، کارکنوں اور سیاسی مخالفین کے خلاف دشمنی رکھتے ہیں۔

ایک ٹویٹ میں ، وفاقی وزیر برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی اور ٹیلی مواصلات سید امین الحق نے کہا کہ ایپ ابتدائی طور پر ایک محفوظ چیٹ اور آڈیو کال کی سہولیات مہیا کرے گی ، انہوں نے مزید کہا کہ ویڈیو کال کی سہولت بھی جلد ہی ایپ پر دستیاب ہوگی۔

انہوں نے کہا کہ اس ایپ کا مقصد سرکاری افسران کو ایک محفوظ مواصلات کا پلیٹ فارم مہیا کرنا ہے۔

وزارت آئی ٹی اور ٹیلی کام کے مطابق ، ‘بیپ پاکستان’ ایپ کا اندرون خانہ مقدمہ چل رہا ہے ، انہوں نے مزید کہا کہ یہ پلیٹ فارم کچھ ہی مہینوں میں باضابطہ طور پر شروع کردیا جائے گا۔ تمام سرکاری ملازمین کے لئے یہ اطلاق سرکاری مقصد کے لئے استعمال کرنا لازمی ہوگا۔

اسرائیلی اسپائی ویئر

یہاں یہ امر قابل ذکر ہے کہ بھارت نے ایک ایسے فون کو نشانہ بنایا تھا جو اس سے قبل وزیر اعظم عمران خان کے پاس ایک اسرائیلی فرم کے پیگاسس نامی مالویئر کے ذریعہ استعمال ہوا تھا ، عالمی سطح پر تحقیقات میں انکشاف کیا گیا تھا ، جس سے وسیع پیمانے پر رازداری اور حقوق کی پامالیوں کے خدشات کو نظر انداز کیا گیا تھا۔

اس اشاعت میں کہا گیا ، جیسا کہ ایک آزاد اسرائیلی اشاعت ہاریٹیز کے مطابق ، متعدد پاکستانی عہدیداروں ، کشمیری آزادی پسندوں ، بھارتی کانگریس کے رہنما راہول گاندھی ، اور یہاں تک کہ ایک بھارتی سپریم کورٹ کے جج کو بھی نشانہ بنایا گیا۔

ذرائع نے جیو نیوز کو آگاہ کیا تھا کہ بھارت نے اسپائی ویئر کے ذریعے وفاقی کابینہ کے ممبروں کی کالوں اور پیغامات کو ٹیپ کرنے کی کوشش کی ، جس سے پاکستان کو اپنے وفاقی وزراء کے لئے نیا سافٹ ویئر تیار کرنے کا اشارہ ہوا۔

اس پیشرفت کے بعد ، سول اور فوجی قیادت کا ایک اعلی سطح کا اجلاس طلب کیا گیا تھا جو ہندوستان کی جاسوسی کی کوششوں کے خلاف آئندہ کے لائحہ عمل کا فیصلہ کرے گا۔



Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published.