بین الاقوامی جوہری توانائی ایجنسی کا ایک لوگو ، جو اقوام متحدہ کا ادارہ ہے جو جوہری توانائی کے پرامن استعمال کو فروغ دینا چاہتا ہے۔ فوٹو: اے ایف پی

دفتر خارجہ نے بدھ کے روز اعلان کیا کہ پاکستانی جوہری سائنس دانوں اور ایک ادارے نے پائیدار ترقیاتی اہداف کے حصول کے لئے ایٹمی ٹیکنالوجی کے استعمال میں پاکستان کی پیشرفت کو تسلیم کرتے ہوئے بین الاقوامی ایوارڈز حاصل کیے۔

بین الاقوامی جوہری توانائی ایجنسی (IAEA) اور اقوام متحدہ کے فوڈ اینڈ ایگریکلچرل آرگنائزیشن (ایف اے او) نے مشترکہ طور پر ان ایوارڈز سے نوازا ہے۔

ایوارڈز میں پاکستان کے نیوکلیئر انسٹی ٹیوٹ برائے زراعت اور حیاتیات (این آئی اے بی) کو بقایا اچیومنٹ ایوارڈ شامل ہے۔ اسی علاقے میں کام کرنے کے لئے ٹیم اچیومنٹ ایوارڈ پاکستان جوہری توانائی کمیشن (پی اے ای سی) میں چار سائنس دانوں کے ایک گروپ کو بھی گیا ہے۔

مزید پڑھ: پاکستان کا بھارت سے جوہری تحفظ کے لئے سخت اقدامات اٹھانے کا مطالبہ

ایک تیسرا ایوارڈ ، ‘ینگ سائینٹسٹ ایوارڈ’ ، جسے پی اے ای سی کے ایک سائنس دان نے پودوں میں تغیر بخش عمل اور اس سے متعلقہ ٹیکنالوجیز میں کام کرنے کے لئے حاصل کیا۔

ایف او کے ایک بیان میں لکھا گیا کہ “یہ ایوارڈ جوہری ٹیکنالوجی میں پاکستان کی ترقی اور پائیدار ترقیاتی اہداف خصوصا فوڈ سکیورٹی کے حصول کے لئے کوششوں کی واضح نشاندہی کرتے ہیں۔”

“پاکستان میں شہریوں کے وسیع پیمانے پر ایٹمی پروگرام عوام کی فلاح و بہبود اور صحت عامہ ، طب ، زراعت ، صنعت اور ایٹمی بجلی پیدا کرنے کے شعبوں میں قومی ترقی میں براہ راست حصہ ڈال رہے ہیں۔” بیان نے مزید کہا۔

ایوارڈ سرٹیفکیٹ IAEA کی 65 ویں جنرل کانفرنس کے دوران ستمبر 2021 میں پیش کیے جائیں گے۔

مزید پڑھ: پاکستان کے لئے صاف توانائی ناگزیر ، وزیر اعظم عمران خان جوہری پلانٹ کے افتتاح کے موقع پر کہتے ہیں

.



Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *